Sayings of the Messenger

 

123Last ›

Chapter No: 1

باب وَمَنْ كَانَ آخِرُ كَلاَمِهِ لاَ إِلَهَ إِلاَّ اللَّهُ

What is said about funerals, and those whose last words were, "La ilaha illallah (none has the right to be worshipped but Allah)"

باب: جنازوں کے باب میں جو حدیثیں آئی ہیں ان کا بیان اور جس شخص کا آخری کلام لا الہ الا اللہ ہو اس کا بیان

وَقِيلَ لِوَهْبِ بْنِ مُنَبِّهٍ أَلَيْسَ لاَ إِلَهَ إِلاَّ اللَّهُ مِفْتَاحُ الْجَنَّةِ قَالَ بَلَى، وَلَكِنْ لَيْسَ مِفْتَاحٌ إِلاَّ لَهُ أَسْنَانٌ، فَإِنْ جِئْتَ بِمِفْتَاحٍ لَهُ أَسْنَانٌ فُتِحَ لَكَ، وَإِلاَّ لَمْ يُفْتَحْ لَكَ‏

Wahab bin Munabbih was asked, "Isn’t the saying, 'La ilaha illallah (non has the right to be worshipped but Allah)', the key of Paradise?" He replied in the affirmative and said, "There is no key without teeth, and if you have the key which have the teeth, it will open it for you, and if it is without teeth, then it will not open it for you."

اور وہب بن منبہ سے کہا گیا کیالا الہ الا اللہ بہشت کی کنجی نہیں ہے؟ انہوں نے کہا کیوں نہیں ہے لیکن ہر کنجی میں دندانے ہونے چاہییں۔اگر دندانوں والی کنجی لائے گا تو تالا(قفل) کھلے گا ورنہ نہیں کھلے گا۔

حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ إِسْمَاعِيلَ، حَدَّثَنَا مَهْدِيُّ بْنُ مَيْمُونٍ، حَدَّثَنَا وَاصِلٌ الأَحْدَبُ، عَنِ الْمَعْرُورِ بْنِ سُوَيْدٍ، عَنْ أَبِي ذَرٍّ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ أَتَانِي آتٍ مِنْ رَبِّي فَأَخْبَرَنِي ـ أَوْ قَالَ بَشَّرَنِي ـ أَنَّهُ مَنْ مَاتَ مِنْ أُمَّتِي لاَ يُشْرِكُ بِاللَّهِ شَيْئًا دَخَلَ الْجَنَّةَ ‏"‏‏.‏ قُلْتُ وَإِنْ زَنَى وَإِنْ سَرَقَ قَالَ ‏"‏ وَإِنْ زَنَى وَإِنْ سَرَقَ ‏"

Narrated By Abu Dhar : Allah's Apostle said, "Someone came to me from my Lord and gave me the news (or good tidings) that if any of my followers dies worshipping none (in any way) along with Allah, he will enter Paradise." I asked, "Even if he committed illegal sexual intercourse (adultery) and theft?" He replied, "Even if he committed illegal sexual intercourse (adultery) and theft."

حضرت ابوذر رضی اللہ عنہ سے روایت ہےکہ انہوں نے کہا: رسول اللہﷺنے فرمایا: میرے پاس( خواب میں) ایک آنے والا (فرشتہ) میرے رب کی طرف سے آیا اس نے بیان کیا یا مجھ کو خوشخبری دی کہ میری امّت میں سے جو کوئی اس حال میں مرجائے کہ اللہ کے ساتھ کسی کو شریک نہ کرتا ہو تو وہ جنت میں جائے گا۔ میں نے عرض کیا خواہ وہ زنا کرے اور وہ چوری کرے۔آپﷺ نے فرمایا: خواہ وہ زنا کرے ،اور چوری کرے۔


حَدَّثَنَا عُمَرُ بْنُ حَفْصٍ، حَدَّثَنَا أَبِي، حَدَّثَنَا الأَعْمَشُ، حَدَّثَنَا شَقِيقٌ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ مَنْ مَاتَ يُشْرِكُ بِاللَّهِ شَيْئًا دَخَلَ النَّارَ ‏"‏‏.‏ وَقُلْتُ أَنَا مَنْ مَاتَ لاَ يُشْرِكُ بِاللَّهِ شَيْئًا دَخَلَ الْجَنَّةَ‏

Narrated By 'Abdullah : Allah's Apostle said, "Anyone who dies worshipping others along with Allah will definitely enter the Fire." I said, "Anyone who dies worshipping none along with Allah will definitely enter Paradise."

حضرت عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے کہا: رسول اللہﷺنے فرمایا: جو شخص شرک کی حالت میں مرجائے وہ دوزخ میں جائے گا اور میں یہ کہتا ہوں کہ جو شخص اس حال میں مرجائے کہ اللہ کے ساتھ کسی کو شریک نہ کرتا ہو وہ جنت میں جائے گا۔

Chapter No: 2

باب الأَمْرِ بِاتِّبَاعِ الْجَنَائِزِ

The order of following the funeral procession.

باب: جنازے میں شریک ہونے کا حکم۔

حَدَّثَنَا أَبُو الْوَلِيدِ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنِ الأَشْعَثِ، قَالَ سَمِعْتُ مُعَاوِيَةَ بْنَ سُوَيْدِ بْنِ مُقَرِّنٍ، عَنِ الْبَرَاءِ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ أَمَرَنَا النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم بِسَبْعٍ، وَنَهَانَا عَنْ سَبْعٍ أَمَرَنَا بِاتِّبَاعِ الْجَنَائِزِ، وَعِيَادَةِ الْمَرِيضِ، وَإِجَابَةِ الدَّاعِي، وَنَصْرِ الْمَظْلُومِ، وَإِبْرَارِ الْقَسَمِ، وَرَدِّ السَّلاَمِ، وَتَشْمِيتِ الْعَاطِسِ‏.‏ وَنَهَانَا عَنْ آنِيَةِ الْفِضَّةِ، وَخَاتَمِ الذَّهَبِ، وَالْحَرِيرِ، وَالدِّيبَاجِ، وَالْقَسِّيِّ، وَالإِسْتَبْرَقِ‏

Narrated By Al-Bara' bin 'Azib : Allah's Apostle ordered us to do seven things and forbade us to do other seven. He ordered us: to follow the funeral procession. to visit the sick, to accept invitations, to help the oppressed, to fulfil the oaths, to return the greeting and to reply to the sneezer: (saying, "May Allah be merciful on you," provided the sneezer says, "All the praises are for Allah,"). He forbade us to use silver utensils and dishes and to wear golden rings, silk (clothes), Dibaj (pure silk cloth), Qissi and Istabraq (two kinds of silk cloths).

حضرت براء بن عازب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے کہا: رسول اللہ ﷺنے ہم کو سات باتوں کا حکم دیا، اور سات باتوں سے منع فرمایا۔آپﷺ نے حکم دیا جنازوں کے ساتھ جانے کا،بیمار کی عیادت کا، دعوت قبول کرنے کا، مظلوم کی مدد کرنے کا، قسم پورا کرنے کا،سلام کا جواب دینے کا،چھینکنے والے کےلیے دعا کرنے کا اور آپﷺ نے منع فرمایا: چاندی کے برتن ، سونے کی انگوٹھی، خالص ریشمی کپڑے اور دیباج اورقسی اور استبرق (ریشمی کپڑوں کی قسمیں) سے۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدٌ، حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ أَبِي سَلَمَةَ، عَنِ الأَوْزَاعِيِّ، قَالَ أَخْبَرَنِي ابْنُ شِهَابٍ، قَالَ أَخْبَرَنِي سَعِيدُ بْنُ الْمُسَيَّبِ، أَنَّ أَبَا هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَقُولُ ‏"‏ حَقُّ الْمُسْلِمِ عَلَى الْمُسْلِمِ خَمْسٌ رَدُّ السَّلاَمِ، وَعِيَادَةُ الْمَرِيضِ، وَاتِّبَاعُ الْجَنَائِزِ، وَإِجَابَةُ الدَّعْوَةِ، وَتَشْمِيتُ الْعَاطِسِ ‏"‏‏.‏ تَابَعَهُ عَبْدُ الرَّزَّاقِ قَالَ أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ‏.‏ وَرَوَاهُ سَلاَمَةُ عَنْ عُقَيْلٍ‏

Narrated By Abu Huraira : I heard Allah's Apostle saying, "The rights of a Muslim on the Muslims are to follow the funeral processions, to accept invitation and to reply the sneezer.

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے کہا: میں نے رسول اللہﷺ سے سنا، آپﷺ فرماتے تھے مسلمان کے دوسرےمسلمان پر پانچ حق ہیں: سلام کا جواب دینا، مریض کی عیادت کرنا، اور جنازے کے ساتھ جانا، اور دعوت قبول کرنا، اور چھینک کا جواب دینا۔

Chapter No: 3

باب الدُّخُولِ عَلَى الْمَيِّتِ بَعْدَ الْمَوْتِ إِذَا أُدْرِجَ فِي كَفَنِهِ

Visiting the deceased person after he has been put in his shroud (burial cloth)

باب: جب مردہ کفن میں لپیٹ لیا جائے تو اس کے پاس جانا(اس کو دیکھنا)

حَدَّثَنَا بِشْرُ بْنُ مُحَمَّدٍ، أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللَّهِ، قَالَ أَخْبَرَنِي مَعْمَرٌ، وَيُونُسُ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، قَالَ أَخْبَرَنِي أَبُو سَلَمَةَ، أَنَّ عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ زَوْجَ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم أَخْبَرَتْهُ قَالَتْ أَقْبَلَ أَبُو بَكْرٍ ـ رضى الله عنه ـ عَلَى فَرَسِهِ مِنْ مَسْكَنِهِ بِالسُّنْحِ حَتَّى نَزَلَ، فَدَخَلَ الْمَسْجِدَ، فَلَمْ يُكَلِّمِ النَّاسَ، حَتَّى نَزَلَ فَدَخَلَ عَلَى عَائِشَةَ ـ رضى الله عنها ـ فَتَيَمَّمَ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم وَهُوَ مُسَجًّى بِبُرْدِ حِبَرَةٍ، فَكَشَفَ عَنْ وَجْهِهِ، ثُمَّ أَكَبَّ عَلَيْهِ فَقَبَّلَهُ ثُمَّ بَكَى فَقَالَ بِأَبِي أَنْتَ يَا نَبِيَّ اللَّهِ، لاَ يَجْمَعُ اللَّهُ عَلَيْكَ مَوْتَتَيْنِ، أَمَّا الْمَوْتَةُ الَّتِي كُتِبَتْ عَلَيْكَ فَقَدْ مُتَّهَا‏

Narrated By 'Aisha : Abu Bakr came riding his horse from his dwelling place in As-Sunh. He got down from it, entered the Mosque and did not speak with anybody till he came to me and went direct to the Prophet, who was covered with a marked blanket. Abu Bakr uncovered his face. He knelt down and kissed him and then started weeping and said, "My father and my mother be sacrificed for you, O Allah's Prophet! Allah will not combine two deaths on you. You have died the death which was written for you." Narrated Abu Salama from Ibn Abbas : Abu Bakr came out and 'Umar , was addressing the people, and Abu Bakr told him to sit down but 'Umar refused. Abu Bakr again told him to sit down but 'Umar again refused. Then Abu Bakr recited the Tashah-hud (i.e. none has the right to be worshipped but Allah and Muhammad is Allah's Apostle) and the people attended to Abu Bakr and left 'Umar. Abu Bakr said, "Amma ba'du, whoever amongst you worshipped Muhammad, then Muhammad is dead, but whoever worshipped Allah, Allah is alive and will never die. Allah said: 'Muhammad is no more than an Apostle and indeed (many) Apostles have passed away before him... (up to the) grateful.' " (3.144) (The narrator added, "By Allah, it was as if the people never knew that Allah had revealed this verse before till Abu Bakr recited it and then whoever heard it, started reciting it.")

حضرت ابو سلمہ نے بیان کیا کہ ان سے نبیﷺکی زوجہ محترمہ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے خبر دی کہ(جب آپﷺ کی وفات ہوگئی) تو ابوبکر رضی اللہ عنہ اپنے مکان سے جو سُنح میں تھا گھوڑے پر سوار ہوکر آئے گھوڑے سے اُترکر مسجد میں گئے، کسی سے بات نہیں کی۔پھر حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کے حجرے میں گئے، وہاں نبی ﷺ کو دیکھنے لگے،آپﷺ کو ایک لکیردار یمنی چادر سے ڈھانپ دیا گیا تھا۔حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے آپﷺ کے چہرہ مبارک سے (چادر) ہٹائی اورگرکر آپﷺ کا بوسہ لیا پھر روئے اور کہنے لگے: اے اللہ کے نبی! میرا باپ آپﷺ پر قربان! آپﷺ کو اللہ تعالیٰ دوبارہ نہیں مارے گا۔ بس جو موت آپﷺ کے حصے میں اللہ تعالیٰ نے لکھ دی تھی وہ ہوچکی۔


قَالَ أَبُو سَلَمَةَ فَأَخْبَرَنِي ابْنُ عَبَّاسٍ ـ رضى الله عنهما ـ أَنَّ أَبَا بَكْرٍ ـ رضى الله عنه ـ خَرَجَ وَعُمَرُ ـ رضى الله عنه ـ يُكَلِّمُ النَّاسَ‏.‏ فَقَالَ اجْلِسْ‏.‏ فَأَبَى‏.‏ فَقَالَ اجْلِسْ‏.‏ فَأَبَى، فَتَشَهَّدَ أَبُو بَكْرٍ ـ رضى الله عنه ـ فَمَالَ إِلَيْهِ النَّاسُ، وَتَرَكُوا عُمَرَ فَقَالَ أَمَّا بَعْدُ، فَمَنْ كَانَ مِنْكُمْ يَعْبُدُ مُحَمَّدًا صلى الله عليه وسلم فَإِنَّ مُحَمَّدًا صلى الله عليه وسلم قَدْ مَاتَ، وَمَنْ كَانَ يَعْبُدُ اللَّهَ فَإِنَّ اللَّهَ حَىٌّ لاَ يَمُوتُ، قَالَ اللَّهُ تَعَالَى ‏{‏وَمَا مُحَمَّدٌ إِلاَّ رَسُولٌ‏}‏ إِلَى ‏{‏الشَّاكِرِينَ‏}‏ وَاللَّهِ لَكَأَنَّ النَّاسَ لَمْ يَكُونُوا يَعْلَمُونَ أَنَّ اللَّهَ أَنْزَلَ الآيَةَ حَتَّى تَلاَهَا أَبُو بَكْرٍ ـ رضى الله عنه ـ فَتَلَقَّاهَا مِنْهُ النَّاسُ، فَمَا يُسْمَعُ بَشَرٌ إِلاَّ يَتْلُوهَا‏

Narrated By 'Aisha : Abu Bakr came riding his horse from his dwelling place in As-Sunh. He got down from it, entered the Mosque and did not speak with anybody till he came to me and went direct to the Prophet, who was covered with a marked blanket. Abu Bakr uncovered his face. He knelt down and kissed him and then started weeping and said, "My father and my mother be sacrificed for you, O Allah's Prophet! Allah will not combine two deaths on you. You have died the death which was written for you." Narrated Abu Salama from Ibn Abbas : Abu Bakr came out and 'Umar , was addressing the people, and Abu Bakr told him to sit down but 'Umar refused. Abu Bakr again told him to sit down but 'Umar again refused. Then Abu Bakr recited the Tashah-hud (i.e. none has the right to be worshipped but Allah and Muhammad is Allah's Apostle) and the people attended to Abu Bakr and left 'Umar. Abu Bakr said, "Amma ba'du, whoever amongst you worshipped Muhammad, then Muhammad is dead, but whoever worshipped Allah, Allah is alive and will never die. Allah said: 'Muhammad is no more than an Apostle and indeed (many) Apostles have passed away before him... (up to the) grateful.' " (3.144) (The narrator added, "By Allah, it was as if the people never knew that Allah had revealed this verse before till Abu Bakr recited it and then whoever heard it, started reciting it.")

حضرت ابو سلمہ رضی اللہ عنہ نے کہا مجھ سے ابن عباس رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ جب باہر نکلے تو اس وقت حضرت عمر رضی اللہ عنہ لوگوں سے باتیں کررہے تھے،اور حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے فرمایا: بیٹھ جاؤ ، لیکن حضرت عمر رضی اللہ عنہ نہیں مانے، آخر حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے کلمہ شہادت پڑھا تو تمام مجمع آپ کی طرف متوجہ ہوگیا، اور حضرت عمر رضی اللہ عنہ کو چھوڑ دیا۔ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے کہا: امّا بعد! دیکھو(مسلمانو)جو کوئی تم میں سے محمّدﷺ کی پوجتا کرتا تھا تو محمّد ﷺ وفات ہوچکے ہیں اور جو کوئی اللہ کی عبادت کرتا تھا ہے اللہ تو باقی رہنے والا ہےکبھی مرنے والا نہیں۔پھر سورت آلِ عمران کی یہ آیت پڑھی محمّدتو صرف رسول ہیں ان سے پہلے کئی رسول گزر چکے ہیں شاکرین تک۔اللہ کی قسم! ایسا معلوم ہوا گویا لوگ جانتے ہی نہ تھے کہ اللہ نے یہ آیت اتاری ہے یہاں تک کہ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے اس کو پڑھا اس وقت صحابہ نے یہ آیت آپ سے سیکھ لی پھر تو ہر شخص کی زبان پر یہی آیت تھی۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ بُكَيْرٍ، حَدَّثَنَا اللَّيْثُ، عَنْ عُقَيْلٍ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، قَالَ أَخْبَرَنِي خَارِجَةُ بْنُ زَيْدِ بْنِ ثَابِتٍ، أَنَّ أُمَّ الْعَلاَءِ ـ امْرَأَةً مِنَ الأَنْصَارِ ـ بَايَعَتِ النَّبِيَّ صلى الله عليه وسلم أَخْبَرَتْهُ أَنَّهُ اقْتُسِمَ الْمُهَاجِرُونَ قُرْعَةً فَطَارَ لَنَا عُثْمَانُ بْنُ مَظْعُونٍ، فَأَنْزَلْنَاهُ فِي أَبْيَاتِنَا، فَوَجِعَ وَجَعَهُ الَّذِي تُوُفِّيَ فِيهِ، فَلَمَّا تُوُفِّيَ وَغُسِّلَ وَكُفِّنَ فِي أَثْوَابِهِ، دَخَلَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَقُلْتُ رَحْمَةُ اللَّهِ عَلَيْكَ أَبَا السَّائِبِ، فَشَهَادَتِي عَلَيْكَ لَقَدْ أَكْرَمَكَ اللَّهُ‏.‏ فَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ وَمَا يُدْرِيكِ أَنَّ اللَّهَ قَدْ أَكْرَمَهُ ‏"‏‏.‏ فَقُلْتُ بِأَبِي أَنْتَ يَا رَسُولَ اللَّهِ فَمَنْ يُكْرِمُهُ اللَّهُ فَقَالَ ‏"‏ أَمَّا هُوَ فَقَدْ جَاءَهُ الْيَقِينُ، وَاللَّهِ إِنِّي لأَرْجُو لَهُ الْخَيْرَ، وَاللَّهِ مَا أَدْرِي ـ وَأَنَا رَسُولُ اللَّهِ ـ مَا يُفْعَلُ بِي ‏"‏‏.‏ قَالَتْ فَوَاللَّهِ لاَ أُزَكِّي أَحَدًا بَعْدَهُ أَبَدًا‏ حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عُفَيْرٍ، حَدَّثَنَا اللَّيْثُ، مِثْلَهُ‏.‏ وَقَالَ نَافِعُ بْنُ يَزِيدَ عَنْ عُقَيْلٍ، مَا يُفْعَلُ بِهِ وَتَابَعَهُ شُعَيْبٌ وَعَمْرُو بْنُ دِينَارٍ وَمَعْمَرٌ‏

Narrated By Kharija bin Zaid bin Thabit : Um Al-'Ala', an Ansari woman who gave the pledge of allegiance to the Prophet said to me, "The emigrants were distributed amongst us by drawing lots and we got in our share 'Uthman bin Maz'un. We made him stay with us in our house. Then he suffered from a disease which proved fatal when he died and was given a bath and was shrouded in his clothes, Allah's Apostle came I said, 'May Allah be merciful to you, O Abu As-Sa'ib! I testify that Allah has honoured you'. The Prophet said, 'How do you know that Allah has honoured him?' I replied, 'O Allah's Apostle! Let my father be sacrificed for you! On whom else shall Allah bestow His honour?' The Prophet said, 'No doubt, death came to him. By Allah, I too wish him good, but by Allah, I do not know what Allah will do with me though I am Allah's Apostle.' By Allah, I never attested the piety of anyone after that."

خارجہ بن زید بن ثابت سے روایت ہے کہ ام العلاء نے جو ایک انصاری عورت تھی اور جس نے نبی ﷺ سے بیعت کی تھی،بیان کیا کہ مہاجرین قرعہ ڈال کر (انصار کو) بانٹ دیئے گئے۔ہمارے حصّے میں حضرت عثمان بن مظعون آئے۔ہم نے ان کو اپنے گھروں میں اتارا، پھر وہ اس بیماری میں مبتلا ہوئے جس میں انتقال کیا۔ جب وہ مرگئے ان کو غسل دیا گیا اور کفن کے کپڑے پہنائے گئے تو رسول اللہ ﷺ تشریف لائے۔ میں نے کہا: اے ابو السائب (یہ عثمان کی کنیت تھی) اللہ تم پر رحم کرے میں تو یہ گواہی دیتی ہوں کہ اللہ نے تم کو عزّت دی نبیﷺ نے فرمایا: (ام العلاء) تجھ کو کیسے معلوم ہوا کہ اللہ نے اس کو عزّت دی۔ میں نے عرض کیا رسول اللہ ﷺ آپﷺ پر میرے ماں باپ قربان، پھر اللہ تعالیٰ کس کو عزّت دے گا۔آپ ﷺنے فرمایا: اس میں شبہ نہیں ہے کہ ان کی موت آچکی ہے ، قسم اللہ کی ! میں بھی ان کے لیے خیر ہی کی امید رکھتا ہوں لیکن واللہ! مجھے خود اپنے متعلق بھی معلوم نہیں ہے کہ میرے ساتھ کیا معاملہ ہوگا حالانکہ میں اللہ کا رسول ہوں ۔ ام العلاء نے کہا: اللہ کی قسم ! اب میں کبھی کسی کو پاکیزہ نہیں کہوں گی یعنی اس طرح کی گواہی نہیں دوں گی۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، حَدَّثَنَا غُنْدَرٌ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، قَالَ سَمِعْتُ مُحَمَّدَ بْنَ الْمُنْكَدِرِ، قَالَ سَمِعْتُ جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ ـ رضى الله عنهما ـ قَالَ لَمَّا قُتِلَ أَبِي جَعَلْتُ أَكْشِفُ الثَّوْبَ عَنْ وَجْهِهِ أَبْكِي، وَيَنْهَوْنِي عَنْهُ وَالنَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم لاَ يَنْهَانِي، فَجَعَلَتْ عَمَّتِي فَاطِمَةُ تَبْكِي، فَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ تَبْكِينَ أَوْ لاَ تَبْكِينَ، مَا زَالَتِ الْمَلاَئِكَةُ تُظِلُّهُ بِأَجْنِحَتِهَا حَتَّى رَفَعْتُمُوهُ ‏"‏‏.‏ تَابَعَهُ ابْنُ جُرَيْجٍ أَخْبَرَنِي ابْنُ الْمُنْكَدِرِ سَمِعَ جَابِرًا ـ رضى الله عنه

Narrated By Jabir bin 'Abdullah : When my father was martyred, I lifted the sheet from his face and wept and the people forbade me to do so but the Prophet did not forbid me. Then my aunt Fatima began weeping and the Prophet said, "It is all the same whether you weep or not. The angels were shading him continuously with their wings till you shifted him (from the field)."

حضرت جابر بن عبد اللہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نےکہا: جب میرے والد (عبد اللہ بن عمرو اُحد کے دن) قتل کیے گئے۔ میں ان کے چہرہ سے کپڑا کھول کر رونے لگا اور لوگ مجھ کو منع کرتے تھے لیکن نبیﷺ نے کچھ نہیں کہا۔ لیکن جب میری پھوپی فاطمہ رونے لگیں تو نبیﷺ نے فرمایا: تم لوگ روؤ یا خاموش رہو۔ جب تک تم لوگ میت کو نہیں اٹھاتے فرشتے اس پر اپنے پروں کا سایہ برابر کیے ہوئے ہیں۔

Chapter No: 4

باب الرَّجُلِ يَنْعَى إِلَى أَهْلِ الْمَيِّتِ بِنَفْسِهِ

A man who informs the relatives of deceased person (of his death) by himself.

باب: آدمی اپنی ذات سے موت کی خبر میّت کے وارثوں کو سنا سکتا ہے۔

حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ، قَالَ حَدَّثَنِي مَالِكٌ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم نَعَى النَّجَاشِيَّ فِي الْيَوْمِ الَّذِي مَاتَ فِيهِ، خَرَجَ إِلَى الْمُصَلَّى، فَصَفَّ بِهِمْ وَكَبَّرَ أَرْبَعًا‏

Narrated By Abu Huraira : Allah's Apostle informed (the people) about the death of An-Najashi on the very day he died. He went towards the Musalla (praying place) and the people stood behind him in rows. He said four Takbirs (i.e. offered the Funeral prayer).

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺ نے نجاشی (حبش کے بادشاہ) کے مرنے کی اسی روز خبر دی جس روز وہ فوت ہوگیا۔ پھر آپﷺنماز پڑھنے کی جگہ گئے ،اور لوگوں کے ساتھ صف باندھ کر چار تکبیریں کہیں۔


حَدَّثَنَا أَبُو مَعْمَرٍ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَارِثِ، حَدَّثَنَا أَيُّوبُ، عَنْ حُمَيْدِ بْنِ هِلاَلٍ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ قَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ أَخَذَ الرَّايَةَ زَيْدٌ فَأُصِيبَ، ثُمَّ أَخَذَهَا جَعْفَرٌ فَأُصِيبَ، ثُمَّ أَخَذَهَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ رَوَاحَةَ فَأُصِيبَ ـ وَإِنَّ عَيْنَىْ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم لَتَذْرِفَانِ ـ ثُمَّ أَخَذَهَا خَالِدُ بْنُ الْوَلِيدِ مِنْ غَيْرِ إِمْرَةٍ فَفُتِحَ لَهُ ‏"‏

Narrated By Anas bin Malik : The Prophet said, "Zaid took over the flag and was martyred. Then it was taken by Jafar who was martyred as well. Then 'Abdullah bin Rawaha took the flag but he too was martyred and at that time the eyes of Allah's Apostle were full of tears. Then Khalid bin Al-Walid took the flag without being nominated as a chief (before hand) and was blessed with victory."

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نےکہا: نبیﷺ نے (غزوۂ موتہ کا تذکرہ کرتے ہوئے) فرمایا: پہلے حضرت زید رضی اللہ عنہ نے جھنڈا سنبھالا، وہ شہید ہوئے۔ پھر حضرت جعفر رضی اللہ عنہ نے سنبھالا وہ بھی شہید ہوئے۔ پھر حضرت عبد اللہ بن رواحہ رضی اللہ عنہ نے سنبھالا وہ بھی شہید ہوئے۔اس وقت آپﷺ کی آنکھوں میں آنسو بہہ رہے تھے۔ پھر خالد بن ولید رضی اللہ عنہ نے خود اپنے طور پر جھنڈا سنبھالا اور ان کو فتح حاصل ہوئی۔

Chapter No: 5

باب الإِذْنِ بِالْجَنَازَةِ

What is said regarding conveying the news of funeral (procession).

باب: جنازہ تیار ہو تو لوگوں کو خبر دینا

وَقَالَ أَبُو رَافِعٍ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ قَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ أَلاَ آذَنْتُمُونِي ‏"‏‏

Narrated Abu Hurairah, once the Prophet (s.a.w) said (regarding a deceased person), "Why did you not inform me (about his/her death)?"

اور ابو الرافع نے ابوہریرہؓ سے رویت کیا ہے نبیﷺ نے لوگوں سے فرمایا تم نے مجھ کو خبر کیوں نہ دی۔

حَدَّثَنَا مُحَمَّدٌ، أَخْبَرَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ، عَنْ أَبِي إِسْحَاقَ الشَّيْبَانِيِّ، عَنِ الشَّعْبِيِّ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ـ رضى الله عنهما ـ قَالَ مَاتَ إِنْسَانٌ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَعُودُهُ فَمَاتَ بِاللَّيْلِ فَدَفَنُوهُ لَيْلاً، فَلَمَّا أَصْبَحَ أَخْبَرُوهُ فَقَالَ ‏"‏ مَا مَنَعَكُمْ أَنْ تُعْلِمُونِي ‏"‏‏.‏ قَالُوا كَانَ اللَّيْلُ فَكَرِهْنَا ـ وَكَانَتْ ظُلْمَةٌ ـ أَنْ نَشُقَّ عَلَيْكَ‏.‏ فَأَتَى قَبْرَهُ فَصَلَّى عَلَيْهِ‏

Narrated By Ibn Abbas : A person died and Allah's Apostle used to visit him. He died at night and (the people) buried him at night. In the morning they informed the Prophet (about his death). He said, "What prevented you from informing me?" They replied, "It was night and it was a dark night and so we disliked to trouble you." The Prophet went to his grave and offered the (funeral) prayer.

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ایک آدمی مرگیا رسول اللہﷺ اس کی عیادت کےلیے جایا کرتے تھے۔ چونکہ اس کا انتقال رات کو ہوا تھا اس لیے لوگوں نے رات ہی کو دفن کردیا تھا۔ جب صبح ہوئی آپﷺکو خبر دی۔ آپﷺنے فرمایا: مجھے بتانے میں کیا رکاوٹ تھی؟ لوگوں نے کہا: رات تھی اور اندھیرا بھی تھا، اس لیے ہم نے مناسب نہیں سمجھا کہ کہیں آپ کو تکلیف نہ ہو۔پھر آپﷺ اس کی قبر پر تشریف لائے اور نماز پڑھی۔

Chapter No: 6

باب فَضْلِ مَنْ مَاتَ لَهُ وَلَدٌ فَاحْتَسَبَ

The superiority of the person whose child dies and he faces the event with patience hoping for Allah’s reward.

باب: جس کا بچہ مر جائے وہ صبر کرے اس کی فضیلت

وَقَالَ اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ ‏{‏وَبَشِّرِ الصَّابِرِينَ‏}‏

And the Statement of Allah, "... Give glad tidings to the patient ones." (V.2:155)

اور اللہ تعا لیٰ نے سورت بقرہ میں فرمایا صبر کرنے والوں خوشخبری سنا۔

حَدَّثَنَا أَبُو مَعْمَرٍ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَارِثِ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ، عَنْ أَنَسٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ قَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ مَا مِنَ النَّاسِ مِنْ مُسْلِمٍ يُتَوَفَّى لَهُ ثَلاَثٌ لَمْ يَبْلُغُوا الْحِنْثَ، إِلاَّ أَدْخَلَهُ اللَّهُ الْجَنَّةَ بِفَضْلِ رَحْمَتِهِ إِيَّاهُمْ ‏"‏‏

Narrated By Anas : The Prophet said, "A Muslim whose three children die before the age of puberty will be granted Paradise by Allah due to his mercy for them."

حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺ نے فرمایا: جس مسلمان کے تین نابالغ بچّے مرجائیں، تو اللہ تعالیٰ اس رحمت کے نتیجے میں جو ان بچوں سے وہ رکھتا ہےمسلمان(بچوں کے باپ اور ماں) کو بھی جنت میں داخل کردے گا۔


حَدَّثَنَا مُسْلِمٌ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ الأَصْبَهَانِيِّ، عَنْ ذَكْوَانَ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ، رضى الله عنه أَنَّ النِّسَاءَ، قُلْنَ لِلنَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم اجْعَلْ لَنَا يَوْمًا‏.‏ فَوَعَظَهُنَّ، وَقَالَ ‏"‏ أَيُّمَا امْرَأَةٍ مَاتَ لَهَا ثَلاَثَةٌ مِنَ الْوَلَدِ كَانُوا حِجَابًا مِنَ النَّارِ ‏"‏‏.‏ قَالَتِ امْرَأَةٌ وَاثْنَانِ‏.‏ قَالَ ‏"‏ وَاثْنَانِ ‏"‏‏

Narrated By Abu Sa'id : The women requested the Prophet, "Please fix a day for us." So the Prophet preached to them and said, "A woman whose three children died would be screened from the Hell Fire by them," Hearing that, a woman asked, "If two died?" The Prophet replied, "Even two (would screen her from the (Hell) Fire. "

حضرت ابو سعید رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ عورتوں نے نبی ﷺ سے عرض کیا: ہمیں بھی ایک دن نصیحت کرنے کےلیے خاص فرمادیجئے گا (آپﷺنے ایک دن مقررکردیا) (ان کو نصیحت کرتے ہوئے) فرمایا: جس عورت کے تین بچّے مرجائیں وہ ( قیامت کے دن) دوزخ سے اس کےلیے ڈھال بن جائیں گے۔ ایک عورت (ام سلیم) نے عرض کیا: اگر دو مرجائیں تو آپﷺ نے فرمایا: دو بھی۔


وَقَالَ شَرِيكٌ عَنِ ابْنِ الأَصْبَهَانِيِّ، حَدَّثَنِي أَبُو صَالِحٍ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ، وَأَبِي، هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنهما ـ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ أَبُو هُرَيْرَةَ ‏"‏ لَمْ يَبْلُغُوا الْحِنْثَ ‏"‏‏

And Abu Huraira added, "Those children should be below the age of puberty."

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ نے یہ بھی کہا: کہ تین نا بالغ بچّے۔


حَدَّثَنَا عَلِيٌّ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، قَالَ سَمِعْتُ الزُّهْرِيَّ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ـ رضى الله عنه ـ عَنِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم قَالَ ‏"‏ لاَ يَمُوتُ لِمُسْلِمٍ ثَلاَثَةٌ مِنَ الْوَلَدِ، فَيَلِجَ النَّارَ إِلاَّ تَحِلَّةَ الْقَسَمِ ‏"‏‏.‏ قَالَ أَبُو عَبْدِ اللَّهِ ‏{‏وَإِنْ مِنْكُمْ إِلاَّ وَارِدُهَا‏}

Narrated By Abu Huraira : The Prophet said, "No Muslim whose three children died will go to the Fire except for Allah's oath (i.e. everyone has to pass over the bridge above the lake of fire)."

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے انہوں نے کہا: نبیﷺ نے فرمایا: جس مسلمان کے تین بچّے فوت ہوجائیں وہ جہنم میں نہیں جائے گا اگر جائے گا صرف قسم پوری کرنے کےلیے جائےگا۔ اور ابو عبداللہ امام بخاری فرماتے ہیں کہ (قرآن کی یہ آیت) تم میں سے ہر ایک کو جہنم کے اوپر سے گزرنا ہوگا۔

Chapter No: 7

باب قَوْلِ الرَّجُلِ لِلْمَرْأَةِ عِنْدَ الْقَبْرِ اصْبِرِي

The saying of a man to a woman at the grave, "Be patient".

باب: ایک عورت قبر کے پاس ہو ، مرد اس سے کہے صبر کر۔

حَدَّثَنَا آدَمُ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، حَدَّثَنَا ثَابِتٌ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ مَرَّ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم بِامْرَأَةٍ عِنْدَ قَبْرٍ وَهِيَ تَبْكِي فَقَالَ ‏"‏ اتَّقِي اللَّهَ وَاصْبِرِي ‏"‏‏

Narrated By Anas bin Malik : The Prophet passed by a woman who was sitting and weeping beside a grave and said to her, "Fear Allah and be patient."

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے کہا: نبیﷺ ایک عورت سے گزرے وہ قبر کے پاس بیٹھی رو رہی تھی۔آپﷺ نے فرمایا: اللہ سے ڈرو اور صبرکرو۔

Chapter No: 8

باب غُسْلِ الْمَيِّتِ وَوُضُوئِهِ بِالْمَاءِ وَالسِّدْرِ

The bath of a dead (Muslim) and his ablution with water and Sidr (lote-tree leaves).

باب: میّت کو پانی اور بیری کے پتّوں سے غسل دینا اور وضو کرانا

وَحَنَّطَ ابْنُ عُمَرَ ـ رضى الله عنهما ـ ابْنًا لِسَعِيدِ بْنِ زَيْدٍ، وَحَمَلَهُ وَصَلَّى وَلَمْ يَتَوَضَّأْ‏.‏ وَقَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ ـ رضى الله عنهما ـ الْمُسْلِمُ لاَ يَنْجُسُ حَيًّا وَلاَ مَيِّتًا‏.‏ وَقَالَ سَعْدٌ لَوْ كَانَ نَجِسًا مَا مَسِسْتُهُ‏.‏ وَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏"‏ الْمُؤْمِنُ لاَ يَنْجُسُ ‏"‏‏

And Ibn 'Umar applied Hanut (a kind of scent) to the dead body of the son of Sa'id bin Zaid and carried it and then offered the funeral prayers, but he did not perform ablution. Ibn ‘Abbas said, "A Muslim never becomes Najas(impure) whether dead or alive." And Sa'd said, "If he had been impure then I would not have touched him." And the Prophet (s.a.w) said, "A faithful believer never becomes Najas(impure)."

اور عبداللہ بن عمرؓ نے سعید بن زید کے بچے کو (جو مرگیاتھا) خوشبو لگائی اور اس کو اٹھایا اور (جنازے کی ) نماز پڑھی اور وضو نہیں کیا اور ابنِ عباسؓ نے کہا مسلمان نہ زندگی میں ناپاک ہوتا ہے نہ مر کر اور سعد بن ابی وقاصؓ نے کہا اگر مردہ نجس ہوتا تو میں اس کو نہ چھوتا اور نبیﷺ نے فرمایا کہ مومن ناپاک نہیں ہوتا۔

حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، قَالَ حَدَّثَنِي مَالِكٌ، عَنْ أَيُّوبَ السَّخْتِيَانِيِّ، عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ سِيرِينَ، عَنْ أُمِّ عَطِيَّةَ الأَنْصَارِيَّةِ ـ رضى الله عنها ـ قَالَتْ دَخَلَ عَلَيْنَا رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم حِينَ تُوُفِّيَتِ ابْنَتُهُ فَقَالَ ‏"‏ اغْسِلْنَهَا ثَلاَثًا أَوْ خَمْسًا أَوْ أَكْثَرَ مَنْ ذَلِكَ إِنْ رَأَيْتُنَّ ذَلِكَ بِمَاءٍ وَسِدْرٍ، وَاجْعَلْنَ فِي الآخِرَةِ كَافُورًا أَوْ شَيْئًا مِنْ كَافُورٍ، فَإِذَا فَرَغْتُنَّ فَآذِنَّنِي ‏"‏‏.‏ فَلَمَّا فَرَغْنَا آذَنَّاهُ فَأَعْطَانَا حِقْوَهُ فَقَالَ ‏"‏ أَشْعِرْنَهَا إِيَّاهُ ‏"‏‏.‏ تَعْنِي إِزَارَهُ‏

Narrated By Um 'Atiyya al-Ansariya : Allah's Apostle came to us when his daughter died and said, "Wash her thrice or five times or more, if you see it necessary, with water and Sidr and then apply camphor or some camphor at the end; and when you finish, notify me." So when we finished it, we informed him and he gave us his waist-sheet and told us to shroud the dead body in it.

حضرت امّ عطیہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ انہوں نے کہا: جب رسول اللہﷺ کی صاحبزادی (حضرت زینب رضی اللہ عنہا) کا انتقال ہوا تو آپﷺ ہمارے پاس تشریف لائے اور فرمانے لگے: اس کو تین بار یا اگر مناسب سمجھو تو پانچ بار یا اس سے زیادہ پانی اور بیری کے پتّوں سےنہلاؤ اور آخر میں کافور رکھو یا کچھ کافور ملا دو۔پھر جب تم نہلا کے فارغ ہوجاؤ تو مجھ کو بتادو۔ حضرت ام عطیہ رضی اللہ عنہا نے کہا: جب ہم نہلا چکے تو آپﷺ کو خبردی۔آپﷺ نے اپنا تہبند عنایت کیا اور فرمایا: یہ اندر اس کے بدن پر لپیٹ دو۔

Chapter No: 9

باب مَا يُسْتَحَبُّ أَنْ يُغْسَلَ وِتْرًا

It is desirable to wash (the dead body) for an odd number of times.

باب: میّت کو طاق بار نہلانا مستحب ہے۔

حَدَّثَنَا مُحَمَّدٌ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَهَّابِ الثَّقَفِيُّ، عَنْ أَيُّوبَ، عَنْ مُحَمَّدٍ، عَنْ أُمِّ عَطِيَّةَ ـ رضى الله عنها ـ قَالَتْ دَخَلَ عَلَيْنَا رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَنَحْنُ نَغْسِلُ ابْنَتَهُ فَقَالَ ‏"‏ اغْسِلْنَهَا ثَلاَثًا أَوْ خَمْسًا أَوْ أَكْثَرَ مِنْ ذَلِكَ بِمَاءٍ وَسِدْرٍ، وَاجْعَلْنَ فِي الآخِرَةِ كَافُورًا، فَإِذَا فَرَغْتُنَّ فَآذِنَّنِي ‏"‏‏.‏ فَلَمَّا فَرَغْنَا آذَنَّاهُ، فَأَلْقَى إِلَيْنَا حِقْوَهُ فَقَالَ ‏"‏ أَشْعِرْنَهَا إِيَّاهُ ‏"‏‏.‏ فَقَالَ أَيُّوبُ وَحَدَّثَتْنِي حَفْصَةُ بِمِثْلِ حَدِيثِ مُحَمَّدٍ وَكَانَ فِي حَدِيثِ حَفْصَةَ ‏"‏ اغْسِلْنَهَا وِتْرًا ‏"‏‏.‏ وَكَانَ فِيهِ ‏:‏ ‏"‏ ثَلاَثًا أَوْ خَمْسًا أَوْ سَبْعًا ‏"‏‏.‏ وَكَانَ فِيهِ أَنَّهُ قَالَ ‏"‏ ابْدَأْنَ بِمَيَامِنِهَا وَمَوَاضِعِ الْوُضُوءِ مِنْهَا ‏"‏‏.‏ وَكَانَ فِيهِ أَنَّ أُمَّ عَطِيَّةَ قَالَتْ وَمَشَطْنَاهَا ثَلاَثَةَ قُرُونٍ‏

Narrated By Um 'Atiyya : Allah's Apostle came to us and we were giving a bath to his (dead) daughter and said, "Wash her three, five or more times with water and Sidr and sprinkle camphor on her at the end; and when you finish, notify me." So when we finished, we informed him and he gave us his waist-sheet and told us to shroud her in it. Aiyub said that Hafsa narrated to him a narration similar to that of Muhammad in which it was said that the bath was to be given for an odd number of times, and the numbers 3, 5 or 7 were mentioned. It was also said that they were to start with the right side and with the parts which were washed in ablution, and that Um 'Atiyya also mentioned, "We combed her hair and divided them in three braids."

حضرت امِّ عطیہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ انہوں نے کہا: رسول اللہﷺ ہمارے پاس تشریف لائے۔ ہم ان کی صاحبزادی کو غسل دے رہی تھیں، آپﷺنے فرمایا: تم اس کو پانی اور بیری کے پتّے سے تین بار یا پانچ بار یا اس سے زیادہ نہلاؤ اور آخر میں کافور بھی استعمال کرو۔ جب تم نہلاکے فارغ ہوجاؤ تو مجھ کو بتادینا۔ جب ہم نہلا چکیں تو آپﷺ کو خبر کی تو آپﷺ نے اپنا تہبند عنایت کیا اور فرمایا یہ اندر اس کے بدن پر لپیٹ دو۔ حضرت حفصہ رضی اللہ عنہ کی حدیث میں یوں ہے، اس کو طاق بار نہلاؤ تین بار یا پانچ بار یا سات بار، اور یہ بھی ہے کہ داہنی طرف سے شروع کرو اور وضو کے اعضاء سے۔ اس میں یہ بھی ہے کہ امّ عطیہ نے کہا :ہم نے ان کے بالوں میں کنگھی کرکے تین لٹوں میں تقسیم کردیا تھا۔

Chapter No: 10

باب يُبْدَأُ بِمَيَامِنِ الْمَيِّتِ

To start from the right side while giving a bath to a dead body.

باب: غسل میّت کے داہنی طرفوں سے شروع کیا جائے۔

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، حَدَّثَنَا خَالِدٌ، عَنْ حَفْصَةَ بِنْتِ سِيرِينَ، عَنْ أُمِّ عَطِيَّةَ ـ رضى الله عنها ـ قَالَتْ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فِي غَسْلِ ابْنَتِهِ ‏"‏ ابْدَأْنَ بِمَيَامِنِهَا وَمَوَاضِعِ الْوُضُوءِ مِنْهَا ‏"‏‏

Narrated By Um 'Atiyya : Allah's Apostle , concerning his (dead) daughter's bath, said, "Start with the right side, and the parts which are washed in ablution."

حضرت امّ عطیہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ انہوں نے کہا: رسول اللہ ﷺ نے اپنی صاحبزادی کے غسل کے وقت فرمایا کہ دائیں طرف سے اور وضو کے مقاموں سے شروع کرو۔

123Last ›