Sayings of the Messenger

 

12345

Chapter No: 21

بابُ طِيْبِ رَائِحَةِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَلِينِ مَسِّهِ وَالتَّبَرُّكِ بِمَسْحِهِ

Concerning the perfumed fragrance of the Prophet ﷺ, his soft touch and taking blessing from his touch

نبی ﷺکے بدن مبارک کی خوشبو اور ملائمت اور بدن کو بطور تبرک چھونے کا بیان

حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ حَمَّادِ بْنِ طَلْحَةَ الْقَنَّادُ ، حَدَّثَنَا أَسْبَاطٌ ، وَهُوَ ابْنُ نَصْرٍ الْهَمْدَانِيُّ ، عَنْ سِمَاكٍ ، عَنْ جَابِرِ بْنِ سَمُرَةَ ، قَالَ : صَلَّيْتُ مَعَ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ صَلاَةَ الأُولَى ، ثُمَّ خَرَجَ إِلَى أَهْلِهِ وَخَرَجْتُ مَعَهُ ، فَاسْتَقْبَلَهُ وِلْدَانٌ ، فَجَعَلَ يَمْسَحُ خَدَّيْ أَحَدِهِمْ وَاحِدًا وَاحِدًا ، قَالَ : وَأَمَّا أَنَا فَمَسَحَ خَدِّي ، قَالَ : فَوَجَدْتُ لِيَدِهِ بَرْدًا ، أَوْ رِيحًا كَأَنَّمَا أَخْرَجَهَا مِنْ جُؤْنَةِ عَطَّارٍ.

It was narrated that Jabir bin Samurah said: “I prayed the first prayer (i.e., Al-Fajr) with the Messenger of Allah (s.a.w), then he went out to his family, and I went him. Some children met him and he started patting their cheeks, one after another. And h also patted my cheeks, and I found his hand to be cool and fragrant, as if he had brought it out of the bag of a perfume seller.”

حضرت جابر بن سمرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے رسو ل اللہﷺکے ساتھ ظہر کی نماز پڑھی ، پھر آپ اپنے گھر کی طرف نکلے ، میں بھی آپ کے ساتھ نکلا ، سامنے سے کچھ بچے آئے ، آپﷺنے ان میں سے ہر ایک کے رخسار پر ہاتھ پھیرا اور میرے رخسار پر بھی ہاتھ پھیرا ، میں نے آپﷺکے دست اقدس کی ٹھنڈک اور خوشبو یوں محسوس کی جیسے آپﷺنے عطار کے ڈبہ سے ہاتھ باہر نکالا ہو۔


وَحَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ ، حَدَّثَنَا جَعْفَرُ بْنُ سُلَيْمَانَ ، عَنْ ثَابِتٍ ، عَنْ أَنَسٍ (ح) وحَدَّثَنِي زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، وَاللَّفْظُ لَهُ ، حَدَّثَنَا هَاشِمٌ ، يَعْنِي ابْنَ الْقَاسِمِ ، حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ ، وَهُوَ ابْنُ الْمُغِيرَةِ ، عَنْ ثَابِتٍ ، قَالَ أَنَسٌ : مَا شَمَمْتُ عَنْبَرًا قَطُّ ، وَلاَ مِسْكًا ، وَلاَ شَيْئًا أَطْيَبَ مِنْ رِيحِ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، وَلاَ مَسِسْتُ شَيْئًا قَطُّ دِيبَاجًا ، وَلاَ حَرِيرًا أَلْيَنَ مَسًّا مِنْ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ.

It was narrated that Anas said: “I have never smelt any amber or musk or anything better than the fragrance of the Messenger of Allah (s.a.w), and or silk softer to the touch than the Messenger of Allah (s.a.w).”

حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺکے جسم اقدس کی جیسی خوشبو تھی ایسی خوشبو نہ عنبر میں تھی ، اور نہ کستوری میں ، اور نہ کسی اور چیز میں تھی ، اور میں نے رسول اللہﷺکے جسم سے زیادہ ملائم نہ دیباج کو پایا ، اور نہ حریر کو ۔


وحَدَّثَنِي أَحْمَدُ بْنُ سَعِيدِ بْنِ صَخْرٍ الدَّارِمِيُّ ، حَدَّثَنَا حَبَّانُ ، حَدَّثَنَا حَمَّادٌ ، حَدَّثَنَا ثَابِتٌ ، عَنْ أَنَسٍ ، قَالَ : كَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَزْهَرَ اللَّوْنِ ، كَأَنَّ عَرَقَهُ اللُّؤْلُؤُ ، إِذَا مَشَى تَكَفَّأَ ، وَلاَ مَسِسْتُ دِيبَاجَةً ، وَلاَ حَرِيرَةً أَلْيَنَ مِنْ كَفِّ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، وَلاَ شَمِمْتُ مِسْكَةً وَلاَ عَنْبَرَةً أَطْيَبَ مِنْ رَائِحَةِ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ.

It was narrated that Anas said: “The Messenger of Allah (s.a.w) was of a fair complexion, and his sweat was like pearls. When he walked he leaned forward. I have not touched any Dibaj or silk softer to the touch than the Messenger of Allah (s.a.w), and I have not smelled any musk or amber more fragrant than the scent of the Messenger of Allah (s.a.w).”

حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺ کا سفید چمکدار رنگ تھا اور آپ ﷺکے پسینہ کے قطرے موتیوں کی طرح چمکتے تھے جب آپ چلتے تو آگے کو جھک کر چلتے تھے ، اور میں نے کسی دیباج اور حریر کو رسول اللہﷺکے ہاتھ سے زیادہ ملائم نہیں پایا ، اور نہ میں نے کسی کستوری یا عنبر کو رسول اللہﷺسے زیادہ خوشبودا ر پایا۔

Chapter No: 22

بابُ طِيبِ عَرَقِهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَالتَّبَرُّكِ بِهِ

Concerning the fragrance of Prophet’s ﷺ sweat and taking blessing from it

نبی ﷺکے پسینہ کی خوشبو اور اس سے تبرک حاصل کرنے کا بیان

حَدَّثَنِي زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، حَدَّثَنَا هَاشِمٌ ، يَعْنِي ابْنَ الْقَاسِمِ ، عَنْ سُلَيْمَانَ ، عَنْ ثَابِتٍ ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ، قَالَ : دَخَلَ عَلَيْنَا النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ عِنْدَنَا ، فَعَرِقَ ، وَجَاءَتْ أُمِّي بِقَارُورَةٍ ، فَجَعَلَتْ تَسْلِتُ الْعَرَقَ فِيهَا ، فَاسْتَيْقَظَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ : يَا أُمَّ سُلَيْمٍ مَا هَذَا الَّذِي تَصْنَعِينَ ؟ قَالَتْ : هَذَا عَرَقُكَ نَجْعَلُهُ فِي طِيبِنَا ، وَهُوَ مِنْ أَطْيَبِ الطِّيبِ.

It was narrated that Anas bin Malik said: “The Prophet (s.a.w) entered upon us and took a nap in our house, and he began to sweat. Our mother came with a glass bottle and started to collect the sweat in it. The Prophet (s.a.w) woke up and said: ‘O Umm Sulaim, what is this that you are doing?’ She said: ‘This is your sweat; we put it in our perfume, and it is among the best of fragrances.”

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ہمارے نبی ﷺتشریف لائے او ر ہمارے پاس ہی سوگئے ، آپﷺکو پسینہ آیا ، میری والدہ ایک بوتل لے کر آئیں اور آپ کا پسینہ پونچھ پونچھ کر اس میں ڈالنے لگیں ، نبی ﷺبیدار ہوئے تو آپﷺنے فرمایا: اے ام سلیم ! یہ کیا کررہی ہو؟ انہوں نے کہا: یہ آپ کا پسینہ ہے جس کو ہم اپنی خوشبو میں ڈالیں گے اور یہ سب سے اچھی خوشبو ہے۔


وحَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ ، حَدَّثَنَا حُجَيْنُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ ، وَهُوَ ابْنُ أَبِي سَلَمَةَ ، عَنْ إِسْحَاقَ بْنِ عَبْدِ اللهِ بْنِ أَبِي طَلْحَةَ ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ، قَالَ : كَانَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَدْخُلُ بَيْتَ أُمِّ سُلَيْمٍ فَيَنَامُ عَلَى فِرَاشِهَا ، وَلَيْسَتْ فِيهِ ، قَالَ : فَجَاءَ ذَاتَ يَوْمٍ فَنَامَ عَلَى فِرَاشِهَا ، فَأُتِيَتْ فَقِيلَ لَهَا : هَذَا النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَامَ فِي بَيْتِكِ ، عَلَى فِرَاشِكِ ، قَالَ فَجَاءَتْ وَقَدْ عَرِقَ ، وَاسْتَنْقَعَ عَرَقُهُ عَلَى قِطْعَةِ أَدِيمٍ ، عَلَى الْفِرَاشِ ، فَفَتَحَتْ عَتِيدَتَهَا فَجَعَلَتْ تُنَشِّفُ ذَلِكَ الْعَرَقَ فَتَعْصِرُهُ فِي قَوَارِيرِهَا ، فَفَزِعَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ : مَا تَصْنَعِينَ ؟ يَا أُمَّ سُلَيْمٍ فَقَالَتْ : يَا رَسُولَ اللهِ ، نَرْجُو بَرَكَتَهُ لِصِبْيَانِنَا ، قَالَ : أَصَبْتِ.

It was narrated that Anas bin Malik said: “The Prophet (s.a.w) used to enter the house of Umm Sulaim and sleep on her bed when she was not there. He came one day and slept on her bed, then she came and it was said to her: ‘The Prophet (s.a.w) is sleeping in your house, on your bed.’ She came, and he had begun to sweat, and the sweat had fallen onto the leather cloth that was on the bed. She opened her jewelry box and started to wipe up that sweat and squeeze it into her bottles. The Prophet (s.a.w) woke up and said: ‘What are you doing, O Umm Sulaim?’ She said: ‘O Messenger of Allah, we hope for blessing for our children.’ He said: ‘You have done right.”’

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی ﷺحضرت ام سلیم کے گھر تشریف لے جاتے اور ان کے بستر پر سوجاتے ،اور وہ گھر میں نہیں ہوتی ۔ حضرت انس رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ ایک دن آپﷺتشریف لائے اور ان کے بستر پر سوگئے ، وہ آئیں تو ان کو بتایا گیا کہ نبی ﷺ تمہارے گھر میں تمہارے بستر پر سوئے ہوئے ہیں ، وہ آئیں اس حال میں کہ آپﷺکو پسینہ آرہا تھا ، اور چمڑے کے بستر پر آپ ﷺ کا پسینہ اکٹھا ہوگیا تھا ۔ حضرت ام سلیم نے اپنا ڈبہ کھولا اور پسینہ پونچھ پونچھ کر اپنی بوتلوں میں بھرنے لگیں ، نبی ﷺگھبراکر اٹھ گئے اور فرمانے لگے : اے ام سلیم ! تم کیا کررہی ہو؟ انہوں نے کہا: اے اللہ کے رسول ﷺ!ہم اس میں اپنے بچوں کے لیے برکت کی امید رکھتے ہیں ۔ آپﷺنے فرمایا: تمہاری امید درست ہے ۔


حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا عَفَّانُ بْنُ مُسْلِمٍ ، حَدَّثَنَا وُهَيْبٌ ، حَدَّثَنَا أَيُّوبُ ، عَنْ أَبِي قِلاَبَةَ ، عَنْ أَنَسٍ ، عَنْ أُمِّ سُلَيْمٍ ، أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ كَانَ يَأْتِيهَا فَيَقِيلُ عِنْدَهَا فَتَبْسُطُ لَهُ نِطْعًا فَيَقِيلُ عَلَيْهِ ، وَكَانَ كَثِيرَ الْعَرَقِ ، فَكَانَتْ تَجْمَعُ عَرَقَهُ فَتَجْعَلُهُ فِي الطِّيبِ وَالْقَوَارِيرِ ، فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : يَا أُمَّ سُلَيْمٍ مَا هَذَا ؟ قَالَتْ : عَرَقُكَ أَدُوفُ بِهِ طِيبِي.

It was narrated from Umm Sulaim that the Prophet (s.a.w) used to come to her and take a nap in her house. She would spread a piece of cloth for him and he would sleep on it. He used to sweat a great deal, and she would collect his sweat and put it in her perfume bottles. The Prophet (s.a.w) said: “O Umm Sulaim, what is this?” She said: “Your sweat; I put it in my perfume.”

حضرت ام سلیم رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ ان کے ہاں نبی ﷺآتے تھے اور وہاں قیلولہ فرماتے ہیں ، وہ آپﷺکے لیے چمڑے کا ایک ٹکڑا بچھا دیتی تھیں تو آپ اس پر آرام فرماتے ، آپﷺکو پسینہ بہت آتا تھا ، وہ اس پسینہ کو جمع کرکے خوشبو میں ملاتیں اور بوتلوں میں بھر دیتیں ، نبیﷺنے فرمایا: اے ام سلیم! یہ کیا ہے ؟ انہوں نے کہا: یہ آپﷺکا پسینہ ہے جس کو میں اپنی خوشبو میں ملاتی ہوں۔

Chapter No: 23

بابُ عَرَقِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي الْبَرْدِ وَحِينَ يَأْتِيهِ الْوَحْي

Prophet’s ﷺ sweating in cold weather while the revelation descended upon him

نبیﷺکے نزول وحی کے وقت سردی کے موسم میں پسینہ آنے کا بیان

حَدَّثَنَا أَبُو كُرَيْبٍ مُحَمَّدُ بْنُ الْعَلاَءِ ، حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ ، عَنْ هِشَامٍ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ عَائِشَةَ ، قَالَتْ : إِنْ كَانَ لَيُنْزَلُ عَلَى رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي الْغَدَاةِ الْبَارِدَةِ ، ثُمَّ تَفِيضُ جَبْهَتُهُ عَرَقًا.

It was narrated that ‘Aishah said: “If the Revelation came to the Messenger of Allah (s.a.w) on a cold day, his forehead would be covered with sweat.”

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ سخت سردی کے دن رسول اللہﷺپر وحی نازل ہوتی ، پھر آپﷺکی پیشانی سے پسینہ بہنے لگتا ہے ۔


وَحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ (ح) وَحَدَّثَنَا أَبُو كُرَيْبٍ ، حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ ، وَابْنُ بِشْرٍ جَمِيعًا ، عَنْ هِشَامٍ ، (ح) وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللهِ بْنِ نُمَيْرٍ ، وَاللَّفْظُ لَهُ ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بِشْرٍ ، حَدَّثَنَا هِشَامٌ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ عَائِشَةَ ، أَنَّ الْحَارِثَ بْنَ هِشَامٍ سَأَلَ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : كَيْفَ يَأْتِيكَ الْوَحْيُ ؟ فَقَالَ : أَحْيَانًا يَأْتِينِي فِي مِثْلِ صَلْصَلَةِ الْجَرَسِ , وَهُوَ أَشَدُّهُ عَلَيَّ ، ثُمَّ يَفْصِمُ عَنِّي وَقَدْ وَعَيْتُهُ ، وَأَحْيَانًا مَلَكٌ فِي مِثْلِ صُورَةِ الرَّجُلِ ، فَأَعِي مَا يَقُولُ.

It was narrated from ‘Aishah that Al-Harith bin Hisham asked the Prophet (s.a.w): “How does the Revelation come to you?” He said: “Sometimes it comes like the ringing of a bell, and that is the hardest for me, but when it is over I have understood it. Sometimes an angel comes in the form of a man, and I understood what he says.”

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ حارث بن ہشام نے نبی ﷺسے سوال کیا کہ آپ کے پاس وحی کیسے آتی ہے ؟ آپﷺنےفرمایا: کبھی کبھی وحی گھنٹی کی آواز کی طرح آتی ہے اور وہ مجھ پر زیادہ سخت ہوتی ہے ، پھر وحی منقطع ہوجاتی ہے ، اس حال میں اس کو یاد کرچکا ہوتا ہوں اور کبھی کبھی فرشتہ آدمی کی شکل میں آتا ہے اور وہ جو کچھ کہتا ہے میں یاد کرتا رہتا ہوں۔


وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الأَعْلَى ، حَدَّثَنَا سَعِيدٌ ، عَنْ قَتَادَةَ ، عَنِ الْحَسَنِ ، عَنْ حِطَّانَ بْنِ عَبْدِ اللهِ ، عَنْ عُبَادَةَ بْنِ الصَّامِتِ ، قَالَ : كَانَ نَبِيُّ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِذَا أُنْزِلَ عَلَيْهِ الْوَحْيُ كُرِبَ لِذَلِكَ وَتَرَبَّدَ وَجْهُهُ.

It was narrated that ‘Ubadah bin As-Samit said: “When the Revelation came upon the Prophet of Allah (s.a.w), he would feel anxious because of that, and his face would change color.”

حضرت عبادہ بن صامت رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ جب نبیﷺپر وحی نازل ہوتی تو آپ پر کرب کی کیفیت طاری ہوتی او رآپﷺکے چہرے کا رنگ متغیر ہوجاتا ۔


وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ ، حَدَّثَنَا مُعَاذُ بْنُ هِشَامٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، عَنْ قَتَادَةَ ، عَنِ الْحَسَنِ ، عَنْ حِطَّانَ بْنِ عَبْدِ اللهِ الرَّقَاشِيِّ ، عَنْ عُبَادَةَ بْنِ الصَّامِتِ ، قَالَ : كَانَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِذَا أُنْزِلَ عَلَيْهِ الْوَحْيُ نَكَسَ رَأْسَهُ , وَنَكَسَ أَصْحَابُهُ رُؤُوسَهُمْ ، فَلَمَّا أُتْلِيَ عَنْهُ رَفَعَ رَأْسَهُ.

It was narrated that ‘Ubadah bin As-Samit said: “When the Revelation came upon the Prophet (s.a.w), he would lower his head, and his Companions would lover their heads, and when it was over, he would raise his head.”

حضرت عبادہ بن صامت رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ جب رسول اللہﷺپر وحی نازل کی جاتی تو آپ اپنا سر مبارک جھکالیتے اور آپﷺکے اصحاب بھی سرجھکالیتے اور جب وحی منقطع ہوتی تو آپﷺاپنا سر مبارک اٹھاتے۔

Chapter No: 24

بابُ صِفَةِ شَعْرِهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَ صِفَاتِهِ وَحُلْيَتِهِ

Regarding; Prophet’s ﷺ hair, his attributes and appearance

نبی ﷺکے بال ، آپﷺکی صفات اور آپﷺکے حلیہ کا بیان

حَدَّثَنَا مَنْصُورُ بْنُ أَبِي مُزَاحِمٍ ، وَمُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرِ بْنِ زِيَادٍ ، قَالَ مَنْصُورٌ : حَدَّثَنَا ، وقَالَ ابْنُ جَعْفَرٍ ، أَخْبَرَنَا إِبْرَاهِيمُ يَعْنِيَانِ ابْنَ سَعْدٍ ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ ، عَنْ عُبَيْدِ اللهِ بْنِ عَبْدِ اللهِ ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ، قَالَ : كَانَ أَهْلُ الْكِتَابِ يَسْدِلُونَ أَشْعَارَهُمْ ، وَكَانَ الْمُشْرِكُونَ يَفْرُقُونَ رُؤُوسَهُمْ ، وَكَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُحِبُّ مُوَافَقَةَ أَهْلِ الْكِتَابِ فِيمَا لَمْ يُؤْمَرْ بِهِ ، فَسَدَلَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَاصِيَتَهُ ، ثُمَّ فَرَقَ بَعْدُ.

It was narrated that Ibn ‘Abbas said: “The Prophet of the Book used to let their hair fall over their foreheads and the idolaters used to part their hair. The Messenger of Allah (s.a.w) liked to do the same as the People of the Book in matters concerning which he had received no command. So the Messenger of Allah (s.a.w) let his hair fall over his forehead, then later on he parted it.”

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ اہل کتاب اپنے بالوں کو لٹکا کر چھوڑ دیتے تھے اور مشرکین اپنے بالوں میں مانگ نکالتے تھے اورجن چیزوں میں رسول اللہﷺکو کوئی خاص حکم نہ دیا گیا ہو آپ ان میں اہل کتاب کی موافقت کو پسند کرتے تھے ، پہلے رسول اللہﷺنے پیشانی پر بال لٹکائے ، پھر آپﷺنے مانگ نکالنا شروع کردی۔


وحَدَّثَنِي أَبُو الطَّاهِرِ ، أَخْبَرَنَا ابْنُ وَهْبٍ ، أَخْبَرَنِي يُونُسُ ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ بِهَذَا الإِسْنَادِ نَحْوَهُ.

A similar report (as no. 6062) was narrated from Ibn Shihab with this chain of narrators.

یہ حدیث ایک اور سند سے بھی مروی ہے۔

Chapter No: 25

بابُ فِي صِفَةِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَنَّهُ كَانَ أَحْسَنَ النَّاسِ وَجْهًا

Concerning Prophet's ﷺ appearance and the fact that he was the most handsome of the people

نبی پاک ﷺکی صفت کا بیان ، آپﷺ چہرہ انور سب سے زیادہ حسین ہے

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، وَمُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ ، قَالاَ : حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، قَالَ : سَمِعْتُ أَبَا إِسْحَاقَ ، قَالَ : سَمِعْتُ الْبَرَاءَ ، يَقُولُ : كَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ رَجُلاً مَرْبُوعًا , بَعِيدَ مَا بَيْنَ الْمَنْكِبَيْنِ , عَظِيمَ الْجُمَّةِ إِلَى شَحْمَةِ أُذُنَيْهِ , عَلَيْهِ حُلَّةٌ حَمْرَاءُ , مَا رَأَيْتُ شَيْئًا قَطُّ أَحْسَنَ مِنْهُ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ.

Al-Bara said: “The Messenger of Allah (s.a.w) was a man of medium height, broad shouldered with thick hair wore a red Hullah and I have never seen anything more handsome than him (s.a.w).

حضرت براء رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺکا درمیانہ قد تھا ، آپﷺکے دو کندھوں کے درمیان زیادہ فاصلہ تھا ، آپﷺکے بال لمبے تھے جو کانوں کی لو تک آتے تھے ، آپﷺنے دو سرخ چادروں کا جوڑا پہنا ہوا تھا ، میں نے رسول اللہﷺسے زیادہ کسی کو حسین نہیں دیکھا۔


حَدَّثَنَا عَمْرٌو النَّاقِدُ ، وَأَبُو كُرَيْبٍ ، قَالاَ : حَدَّثَنَا وَكِيعٌ ، عَنْ سُفْيَانَ ، عَنْ أَبِي إِسْحَاقَ ، عَنِ الْبَرَاءِ ، قَالَ : مَا رَأَيْتُ مِنْ ذِي لِمَّةٍ أَحْسَنَ فِي حُلَّةٍ حَمْرَاءَ مِنْ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ , شَعْرُهُ يَضْرِبُ مَنْكِبَيْهِ , بَعِيدَ مَا بَيْنَ الْمَنْكِبَيْنِ ، لَيْسَ بِالطَّوِيلِ وَلاَ بِالْقَصِيرِ. قَالَ أَبُو كُرَيْبٍ : لَهُ شَعَرٌ.

It was narrated that Al-Bara said: “I have never seen any man with long hair more handsome in a red Hullah than the Messenger of Allah (s.a.w), with his was broad shouldered and was neither tall nor short.”

حضرت براء رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے کسی دراز گیسوؤں والے آدمی کو سرخ چادروں کا جوڑا پہنے ہوئے رسول اللہﷺسے زیادہ حسین نہیں دیکھا ، آپ ﷺکے بال کندھوں تک تھے اور دونوں کندھوں کے درمیان زیادہ فاصلہ تھا ، نہ بہت لمبا قد تھا ، اور نہ بہت چھوٹا (بلکہ درمیانہ قد تھا) ابو کریب نے " شعرہ " کی بجائے " لہ شعر " روایت کیا ہے۔


حَدَّثَنَا أَبُو كُرَيْبٍ مُحَمَّدُ بْنُ الْعَلاَءِ ، حَدَّثَنَا إِسْحَاقُ بْنُ مَنْصُورٍ ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ بْنِ يُوسُفَ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ أَبِي إِسْحَاقَ ، قَالَ : سَمِعْتُ الْبَرَاءَ ، يَقُولُ : كَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَحْسَنَ النَّاسِ وَجْهًا ، وَأَحْسَنَهُمْ خَلْقًا , لَيْسَ بِالطَّوِيلِ الذَّاهِبِ , وَلاَ بِالْقَصِيرِ.

Al-Bara said: “The Messenger of Allah (s.a.w) was the most handsome of people in face and body; he was neither very nor short.”

حضرت براء رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺکا چہرہ سب سے زیادہ حسین تھا ، اور آپﷺکے اخلاق سب سے اچھے تھے ، آپﷺکا قد نہ لمبا تھا او رنہ چھوٹا۔

Chapter No: 26

بابُ صِفَةِ شَعْرِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ

Regarding Prophet’s ﷺ hair

نبی ﷺکے بالوں کا بیان

حَدَّثَنَا شَيْبَانُ بْنُ فَرُّوخَ ، حَدَّثَنَا جَرِيرُ بْنُ حَازِمٍ ، حَدَّثَنَا قَتَادَةُ ، قَالَ : قُلْتُ لأَنَسِ بْنِ مَالِكٍ : كَيْفَ كَانَ شَعَرُ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ؟ قَالَ : كَانَ شَعَرًا رَجِلاً , لَيْسَ بِالْجَعْدِ , وَلاَ السَّبْطِ , بَيْنَ أُذُنَيْهِ وَعَاتِقِهِ.

Qatadah said: “I said to Anas bin Malik: ‘What was the hair of the Prophet (s.a.w) like?’ He said: ‘His hair was wavy, neither curly nor straight, and it hung between his ears and his shoulders.”’

قتادہ سے روایت ہے کہ میں نے حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے پوچھا: رسول اللہﷺکے بال کیسے تھے ؟ انہوں نے کہا: آپﷺکے بال درمیانی تھے ، بہت گھونگر والے تھے ، نہ بالکل سیدھے ، وہ کانوں اور کندھوں کے درمیان تک تھے ۔


حَدَّثَنِي زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، حَدَّثَنَا حَبَّانُ بْنُ هِلاَلٍ (ح) وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الصَّمَدِ ، قَالاَ : حَدَّثَنَا هَمَّامٌ ، حَدَّثَنَا قَتَادَةُ ، عَنْ أَنَسٍ ، أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ كَانَ يَضْرِبُ شَعَرُهُ مَنْكِبَيْهِ.

It was narrated from Anas that the hair of Messenger of Allah (s.a.w) came down to his shoulders.

حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺکے بال کندھوں تک تھے۔


حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، وَأَبُو كُرَيْبٍ ، قَالاَ : حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ ابْنُ عُلَيَّةَ ، عَنْ حُمَيْدٍ ، عَنْ أَنَسٍ ، قَالَ : كَانَ شَعَرُ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِلَى أَنْصَافِ أُذُنَيْهِ.

It was narrated that Anas said: “The hair of the Messenger of Allah (s.a.w) came halfway down his ears.”

حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺکے بال کانوں کے نصف تک تھے۔

Chapter No: 27

بابٌ فِي صِفَةِ فَمِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَعَيْنَيْهِ وَعَقِبَيْهِ

Regarding the beauty of Prophet’s ﷺ face, eyes and heels

نبی ﷺکے منہ ، آنکھ اور ایڑیوں کے حسن کا بیان

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، وَمُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ ، وَاللَّفْظُ لاِبْنِ الْمُثَنَّى ، قَالاَ : حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ سِمَاكِ بْنِ حَرْبٍ ، قَالَ : سَمِعْتُ جَابِرَ بْنَ سَمُرَةَ ، قَالَ : كَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ضَلِيعَ الْفَمِ ، أَشْكَلَ الْعَيْنِ , مَنْهُوسَ الْعَقِبَيْنِ. قَالَ : قُلْتُ لِسِمَاكٍ : مَا ضَلِيعُ الْفَمِ ؟ قَالَ : عَظِيمُ الْفَمِ ، قَالَ قُلْتُ : مَا أَشْكَلُ الْعَيْنِ ؟ قَالَ : طَوِيلُ شَقِّ الْعَيْنِ ، قَالَ : قُلْتُ : مَا مَنْهُوسُ الْعَقِبِ ؟ قَالَ : قَلِيلُ لَحْمِ الْعَقِبِ.

Jabir bin Samurah said: “The Messenger of Allah (s.a.w) had a wide mouth, wide eyes and lean heels.”

حضرت جابر بن سمرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺ فراخ دہن تھے اور بڑی آنکھوں والے تھے ، اور آپ ﷺکی ایڑیوں پر گوشت کم تھا ، میں نے سماک سے پوچھا : ضلیع الفم کا کیا مطلب ہے ؟ انہوں نے کہا: بڑے دہانے والا ، میں نے پوچھا: اشکل العین کا کیا مطلب ہے ؟ انہوں نے کہا: آنکھوں کے بڑے شگاف والا ، میں نے کہا: منہوس العقب کا کیا مطلب ہے ؟ انہوں نے کہا: جس کی ایڑیوں پر کم گوشت ہو۔

Chapter No: 28

بابُ كَانَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَبْيَضَ مَلِيحَ الْوَجْهِ

The Prophet ﷺ had a white beautiful face

نبی ﷺکے سفید چہرے کا بیان

حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ مَنْصُورٍ، حَدَّثَنَا خَالِدُ بْنُ عَبْدِ اللهِ، عَنِ الْجُرَيْرِيِّ، عَنْ أَبِي الطُّفَيْلِ، قَالَ: قُلْتُ لَهُ: أَرَأَيْتَ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ؟ قَالَ: نَعَمْ ، كَانَ أَبْيَضَ مَلِيحَ الْوَجْهِ. قَالَ مُسْلِمُ بْنُ الْحَجَّاجِ : مَاتَ أَبُو الطُّفَيْلِ سَنَةَ مِائَةٍ وَكَانَ آخِرَ مَنْ مَاتَ مِنْ أَصْحَابِ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ.

It was narrated from Al-Jurairi from Abu At-Tufail: “I said to him: ‘Did you see the Messenger of Allah (s.a.w)?’ He said: ‘Yes, he was white with an elegant face.”’ Muslim bin Al-Hajjaj said: Abu At-Tufail died in 100 AH, and he was the last of the Companions of the Messenger of Allah (s.a.w) to die.

جریری سے روایت ہے کہ میں نے حضرت ابو الطفیل سے کہا: کیا تم نے رسو ل اللہﷺکو دیکھا ہے ؟ انہوں نے کہا: ہاں ! آپ ﷺکا چہرہ سفید ملیح تھا، امام مسلم بن حجاج کہتے ہیں کہ حضرت ابو الطفیل رضی اللہ عنہ ایک سو ہجری میں فوت ہوئے اور یہ رسول اللہ ﷺ کے صحابہ میں سب سے آخر میں فوت ہوئے تھے ۔


حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ عُمَرَ الْقَوَارِيرِيُّ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الأَعْلَى بْنُ عَبْدِ الأَعْلَى ، عَنِ الْجُرَيْرِيِّ ، عَنْ أَبِي الطُّفَيْلِ ، قَالَ : رَأَيْتُ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَمَا عَلَى وَجْهِ الأَرْضِ رَجُلٌ رَآهُ غَيْرِي ، قَالَ : فَقُلْتُ لَهُ : فَكَيْفَ رَأَيْتَهُ ؟ قَالَ : كَانَ أَبْيَضَ مَلِيحًا مُقَصَّدًا.

It was narrated that Abu At-Tufail said: “I saw the Messenger of Allah (s.a.w) and there is no one else (left) on the face of the earth who saw him apart from me.” He (the narrator) said: “I said to him: ‘How did you see him?’ He said: ‘He was white and elegant, of the average height and build.”’

حضرت ابو الطفیل رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے رسول اللہﷺکو دیکھا تھا اور اب میرے سوا روئے زمین پر کوئی آدمی نہیں ہے ، جس نے رسول اللہﷺکو دیکھا ہو ، راوی کہتے ہیں : میں نے پوچھا : تم نے آپﷺ کو کس حلیہ میں دیکھا تھا ؟ انہوں نے کہا: آپ سفید ، ملیح اورمیانہ قامت تھے ۔

Chapter No: 29

بابُ شَيْبِهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ

Regarding Prophet’s ﷺ white hairs

آپﷺکے بڑھاپے کا بیان

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، وَابْنُ نُمَيْرٍ ، وَعَمْرٌو النَّاقِدُ جَمِيعًا ، عَنِ ابْنِ إِدْرِيسَ ، قَالَ عَمْرٌو : حَدَّثَنَا عَبْدُ اللهِ بْنُ إِدْرِيسَ الأَوْدِيُّ ، عَنْ هِشَامٍ ، عَنِ ابْنِ سِيرِينَ ، قَالَ : سُئِلَ أَنَسُ بْنُ مَالِكٍ هَلْ خَضَبَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ؟ قَالَ : إِنَّهُ لَمْ يَكُنْ رَأَى مِنَ الشَّيْبِ إِلاَّ ، قَالَ ابْنُ إِدْرِيسَ كَأَنَّهُ يُقَلِّلُهُ ، وَقَدْ خَضَبَ أَبُو بَكْرٍ ، وَعُمَرُ بِالْحِنَّاءِ وَالْكَتَمِ.

It was narrated that Ibn Sirin said: “Anas bin Malik was asked: ‘Did the Messenger of Allah (s.a.w) dye his hair?’ He said: ‘I did not see any white hairs’ – Ibn Idris said: ‘as if he saw only a few’ – ‘but Abu Bakr and ‘Umar dyed their hair with henna and Katam.”’

ابن سیرین بیان کرتے ہیں کہ حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سےسوال کیا گیا کہ رسول اللہﷺنے بال رنگے تھے ؟ انہوں نے کہا:انہوں نے رسول اللہ ﷺکے بہت کم بال سفید دیکھے تھے اور حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ اور حضرت عمر رضی اللہ عنہ مہندی اور سیاہ رنگ کو ملاکر رنگتے تھے۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَكَّارِ بْنِ الرَّيَّانِ ، حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ بْنُ زَكَرِيَّا ، عَنْ عَاصِمٍ الأَحْوَلِ ، عَنِ ابْنِ سِيرِينَ ، قَالَ : سَأَلْتُ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ هَلْ كَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ خَضَبَ ؟ فَقَالَ : لَمْ يَبْلُغِ الْخِضَابَ , كَانَ فِي لِحْيَتِهِ شَعَرَاتٌ بِيضٌ , قَالَ قُلْتُ لَهُ : أَكَانَ أَبُو بَكْرٍ يَخْضِبُ ؟ قَالَ فَقَالَ : نَعَمْ ، بِالْحِنَّاءِ وَالْكَتَمِ.

It was narrated that bin Sirin said: “I asked Anas bin Malik: ‘Did the Messenger of Allah (s.a.w) dye his hair?’ He said: ‘He did not reach the stage where he needed to dye his hairs.’ And he said: ‘There were a few white hairs in his beard.’ I said to him: ‘Did Abu Bakr dye his hair?’ He said: ‘Yes, with heena and Katam.”’

ابن سیرین بیان کرتے ہیں کہ میں نے حضرت انس رضی اللہ عنہ سوال کیا کہ کیا رسول اللہﷺنے بال رنگے تھے ؟ انہوں نے کہا: آپﷺرنگنے کی عمر کو نہیں پہنچے ، آپ کی ڈاڑھی میں صرف چند بال سفید تھے ، میں نے کہا: کیا حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ رنگتے تھے ؟ انہوں نے کہا: ہاں ! وہ مہندی اور سیاہ رنگ ملاکر رنگتے تھے۔


وحَدَّثَنِي حَجَّاجُ بْنُ الشَّاعِرِ ، حَدَّثَنَا مُعَلَّى بْنُ أَسَدٍ ، حَدَّثَنَا وُهَيْبُ بْنُ خَالِدٍ ، عَنْ أَيُّوبَ ، عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ سِيرِينَ ، قَالَ : سَأَلْتُ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ أَخَضَبَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ؟ قَالَ : إِنَّهُ لَمْ يَرَ مِنَ الشَّيْبِ إِلاَّ قَلِيلاً.

It was narrated that Muhammad bin Sirin: “I asked Anas bin Malik: ‘Did the Messenger of Allah (s.a.w) dye his hairs?’ He said: ‘He only saw a few white hairs.”’

محمد بن سیرین کہتے ہیں کہ میں نے حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے سوال کیا کہ کیا رسول اللہﷺنے بالوں کو رنگا ہے ؟ انہوں نے کہا: آپﷺکے سفید بال بہت کم دکھائی دیتےتھے۔


حَدَّثَنِي أَبُو الرَّبِيعِ الْعَتَكِيُّ ، حَدَّثَنَا حَمَّادٌ ، حَدَّثَنَا ثَابِتٌ ، قَالَ: سُئِلَ أَنَسُ بْنُ مَالِكٍ عَنْ خِضَابِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ؟ فَقَالَ : لَوْ شِئْتُ أَنْ أَعُدَّ شَمَطَاتٍ كُنَّ فِي رَأْسِهِ فَعَلْتُ ، وَقَالَ: لَمْ يَخْتَضِبْ ، وَقَدِ اخْتَضَبَ أَبُو بَكْرٍ بِالْحِنَّاءِ وَالْكَتَمِ ، وَاخْتَضَبَ عُمَرُ بِالْحِنَّاءِ بَحْتًا.

Thabit said: Anas bin Malik was asked about the Prophet (s.a.w) dyeing his hair. He said: ‘If I had wanted to count the number of white hairs on his head I could have done so.” And he said: “He did not dye his hair, but Abu Bakr dyed his hair with heena and Katam, and ‘Umar dyed his hair with pure henna.”

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے نبی ﷺکے بال رنگنے کے بارے میں سوال کیا گیا ، انہوں نے کہا: اگر میں رسول اللہﷺکے سر کے سفید بال گننا چاہتا تو گن لیتا اور انہوں نے کہا: آپﷺنے بالوں کو نہیں رنگا ، اورحضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ نے مہندی اور سیاہ رنگ کو ملاکر رنگا اور حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے خالص مہندی کے ساتھ رنگا۔


حَدَّثَنَا نَصْرُ بْنُ عَلِيٍّ الْجَهْضَمِيُّ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا الْمُثَنَّى بْنُ سَعِيدٍ ، عَنْ قَتَادَةَ ، عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ، قَالَ: يُكْرَهُ أَنْ يَنْتِفَ الرَّجُلُ الشَّعْرَةَ الْبَيْضَاءَ مِنْ رَأْسِهِ وَلِحْيَتِهِ ، قَالَ: وَلَمْ يَخْتَضِبْ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، إِنَّمَا كَانَ الْبَيَاضُ فِي عَنْفَقَتِهِ وَفِي الصُّدْغَيْنِ وَفِي الرَّأْسِ نَبْذٌ.

It was narrated that Anas bin Malik said: “It is disliked for a man to pluck out white hairs from his hair and beard.” He said: “And the Messenger of Allah (s.a.w) did not dye his hair; the white hairs were only in the tuft of hair between his lower lip and his chin, and at his temples, and a few on his head.”

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سر اور ڈاڑھی سے سفید بالوں کے نوچنے کو مکروہ سمجھتے تھے ، انہوں نے کہا کہ رسول اللہ ﷺنے بالوں کو نہیں رنگا ،آپﷺکے نچلے ہونٹ کے نیچے ، کنپٹیوں اور سر میں چند بال سفید تھے۔


وحَدَّثَنِيهِ مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الصَّمَدِ ، حَدَّثَنَا الْمُثَنَّى بِهَذَا الإِسْنَادِ.

Al-Muthanna narrated it with this chain of narrators (a Hadith similar to no. 6078).

یہ حدیث ایک اور سند سے مروی ہے۔


وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، وَابْنُ بَشَّارٍ ، وَأَحْمَدُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ الدَّوْرَقِيُّ ، وَهَارُونُ بْنُ عَبْدِ اللهِ ، جَمِيعًا ، عَنْ أَبِي دَاوُدَ ، قَالَ ابْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ دَاوُدَ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ خُلَيْدِ بْنِ جَعْفَرٍ ، سَمِعَ أَبَا إِيَاسٍ ، عَنْ أَنَسٍ: أَنَّهُ سُئِلَ عَنْ شَيْبِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ: مَا شَانَهُ اللَّهُ بِبَيْضَاءَ.

It was narrated that Anas was asked about the white hair of the Prophet (s.a.w). He said: “Allah did not blemish him with white hair.”

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے نبیﷺکے سفید بالوں کے متعلق سوال کیا گیا ، انہوں نے کہا: اللہ تعالیٰ نے آپ کو سفید بالوں کے ساتھ متغیر نہیں کیا۔


حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ يُونُسَ ، حَدَّثَنَا زُهَيْرٌ ، حَدَّثَنَا أَبُو إِسْحَاقَ (ح) وَحَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى ، أَخْبَرَنَا أَبُو خَيْثَمَةَ ، عَنْ أَبِي إِسْحَاقَ ، عَنْ أَبِي جُحَيْفَةَ ، قَالَ: رَأَيْتُ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، هَذِهِ مِنْهُ بَيْضَاءَ ، وَوَضَعَ زُهَيْرٌ بَعْضَ أَصَابِعِهِ عَلَى عَنْفَقَتِهِ , قِيلَ لَهُ: مِثْلُ مَنْ أَنْتَ يَوْمَئِذٍ ؟ فَقَالَ: أَبْرِي النَّبْلَ وَأَرِيشُهَا.

It was narrated that Abu Juhaifah said: “I saw the Messenger of Allah (s.a.w) with this much white hair” – and Zuhair (a sub narrator) put one of his fingers on the tuft of hair between his lower lip and his chin. It was said to him: “How old were you on that day?” He said: “I was making arrows and putting feathers on them (i.e., had passed the age of childhood).”

حضرت ابو جحیفہ رضی اللہ عنہ سے روایت کہ میں نے رسول اللہﷺمیں اتنے سفید بال دیکھے ، پھر راوی نے نچلے ہونٹ کے نیچے والے بالوں پر اپنی انگلی رکھ کر بتایا ۔ ان سے پوچھا گیا کہ تم ان دنوں میں کیسے تھے ؟ انہوں نے کہا: میں ان دنوں میں تیر میں پیکان اور پر لگاتا تھا۔


حَدَّثَنَا وَاصِلُ بْنُ عَبْدِ الأَعْلَى ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ فُضَيْلٍ ، عَنْ إِسْمَاعِيلَ بْنِ أَبِي خَالِدٍ ، عَنْ أَبِي جُحَيْفَةَ ، قَالَ: رَأَيْتُ رَسُولَ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَبْيَضَ , قَدْ شَابَ كَانَ الْحَسَنُ بْنُ عَلِيٍّ يُشْبِهُهُ.

It was narrated that Abu Juhaifah said: “I saw the Messenger of Allah (s.a.w) with a white complexion and some white hairs. Al-Hasan bin ‘Ali resembled him.”

حضرت ابو جحیفہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے رسول اللہﷺ کو دیکھا کہ ان کا رنگ سفید تھا اور آپﷺکے بال سفید ہوگئے تھے اور حضرت حسن بن علی رضی اللہ عنہ آپ کے مشابہ تھے۔


وَحَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ مَنْصُورٍ ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ ، وَخَالِدُ بْنُ عَبْدِ اللهِ (ح) وَحَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بِشْرٍ ، كُلُّهُمْ عَنْ إِسْمَاعِيلَ ، عَنْ أَبِي جُحَيْفَةَ ، بِهَذَا وَلَمْ يَقُولُوا : أَبْيَضَ قَدْ شَابَ.

This was narrated from Abu Juhaifah (a Hadith similar to no. 6081), but they did not say: “Whit a white complexion and white hair.”

ایک اور سند سے حضرت جحیفہ کی یہ روایت منقول ہے اس میں آپ ﷺکے سفید رنگ اور سفید بالوں کا تذکرہ نہیں ہے۔


وَحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا أَبُو دَاوُدَ سُلَيْمَانُ بْنُ دَاوُدَ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ سِمَاكِ بْنِ حَرْبٍ ، قَالَ : سَمِعْتُ جَابِرَ بْنَ سَمُرَةَ ، سُئِلَ عَنْ شَيْبِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ : كَانَ إِذَا دَهَنَ رَأْسَهُ لَمْ يُرَ مِنْهُ شَيْءٌ ، وَإِذَا لَمْ يَدْهُنْ رُئِيَ مِنْهُ.

It was narrated that Simak bin Harb said: “I heard Jabir bin Samurah being asked about the white hair of the Prophet (s.a.w). He said: ‘When he (s.a.w) put oil on his hair none of them could be seen, and if he did not put oil on his hair, they could be seen.”’

حضرت جابر بن سمرہ رضی اللہ عنہ سے نبی ﷺکے سفید بالوں کے بارے میں سوال کیا گیا ، تو انہوں نے کہا: جب آپﷺ سر میں تیل لگاتے تھے تو سفید بال نظر نہیں آتے تھے ،اورجب تیل نہیں لگاتے تھے تو سفید بال نظر آتے تھے

Chapter No: 30

بابُ إِثْبَاتِ خَاتَمِ النُّبُوَّةِ وَصِفَتِهِ وَمَحِلِّهِ مِنْ جَسَدِهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ

Chapter concerning the proof (of existence) of the seal of Prophet hood, its feature and its location on His ﷺ body

مہر نبوت کا آپﷺکے جسم مبارک پر ہونے کا ثبوت، اور اس کے اوصاف اور جگہ کا بیان

وَحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ ، عَنْ إِسْرَائِيلَ ، عَنْ سِمَاكٍ ، أَنَّهُ سَمِعَ جَابِرَ بْنَ سَمُرَةَ ، يَقُولُ : كَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَدْ شَمِطَ مُقَدَّمُ رَأْسِهِ وَلِحْيَتِهِ ، وَكَانَ إِذَا ادَّهَنَ لَمْ يَتَبَيَّنْ ، وَإِذَا شَعِثَ رَأْسُهُ تَبَيَّنَ ، وَكَانَ كَثِيرَ شَعْرِ اللِّحْيَةِ ، فَقَالَ : رَجُلٌ وَجْهُهُ مِثْلُ السَّيْفِ ؟ قَالَ : لاَ ، بَلْ كَانَ مِثْلَ الشَّمْسِ وَالْقَمَرِ ، وَكَانَ مُسْتَدِيرًا وَرَأَيْتُ الْخَاتَمَ عِنْدَ كَتِفِهِ مِثْلَ بَيْضَةِ الْحَمَامَةِ يُشْبِهُ جَسَدَهُ.

Jabir bin Samurah said: “Some whiteness had appeared in the hair of the Messenger of Allah (s.a.w), at the front of his head and in his beard. If he put on his hair they could not be seen, but if his hair was uncombed, they could be seen, and the hair of his beard was thick.” A man asked: “Was his face bright like a sword?” He said: “No rather it was like the sun and the moon, and it was round. And I saw the Seal (of Prophet hood) on his shoulder, like a pigeon’s egg, the same color as his body.”

حضرت جابر بن سمرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺکے سر کے اگلے بال اور داڑھی کے بال سفید ہوگئے ، جب آپ ﷺتیل لگاتے تو وہ سفیدی معلوم نہیں ہوتی تھی، اور جب آپ کے بال بکھرے ہوئے ہوتے تو سفیدی معلوم ہوتی ۔ آپﷺکی داڑھی مبارک بہت گھنی تھی ، ایک آدمی نے کہا: آپﷺکا چہرہ تلوار کی طرح تھا ، انہوں نے کہا: نہیں ، بلکہ سورج اور چاند کی طرح تھا ، اور آپﷺکا چہرہ گول تھا اور میں نے آپﷺکے کندھے کے پاس کبوتر کے انڈے کے برابر مہر نبوت دیکھی جس کا رنگ جسم کے رنگ کے مشابہ تھا۔


حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ سِمَاكٍ ، قَالَ : سَمِعْتُ جَابِرَ بْنَ سَمُرَةَ ، قَالَ : رَأَيْتُ خَاتَمًا فِي ظَهْرِ رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، كَأَنَّهُ بَيْضَةُ حَمَامٍ.

Jabir bin Samurah said: “I saw a seal on the back of the Messenger of Allah (s.a.w), like a pigeon’s egg.”

حضرت جابر بن سمرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے رسول اللہﷺکی پشت مبارک میں مہر نبوت دیکھی ، جیسے کبوتر کا انڈہ ہو۔


وَحَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ ، حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ مُوسَى ، أَخْبَرَنَا حَسَنُ بْنُ صَالِحٍ ، عَنْ سِمَاكٍ ، بِهَذَا الإِسْنَادِ مِثْلَهُ.

A similar report (as Hadith no. 6085) was narrated from Simak with this chain of narrators.

یہ حدیث ایک اور سند سے بھی حسب سابق مروی ہے۔


وَحَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ ، وَمُحَمَّدُ بْنُ عَبَّادٍ ، قَالاَ : حَدَّثَنَا حَاتِمٌ ، وَهُوَ ابْنُ إِسْمَاعِيلَ ، عَنِ الْجَعْدِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ ، قَالَ : سَمِعْتُ السَّائِبَ بْنَ يَزِيدَ ، يَقُولُ : ذَهَبَتْ بِي خَالَتِي إِلَى رَسُولِ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَقَالَتْ : يَا رَسُولَ اللهِ ، إِنَّ ابْنَ أُخْتِي وَجِعٌ فَمَسَحَ رَأْسِي وَدَعَا لِي بِالْبَرَكَةِ ، ثُمَّ تَوَضَّأَ فَشَرِبْتُ مِنْ وَضُوئِهِ ، ثُمَّ قُمْتُ خَلْفَ ظَهْرِهِ فَنَظَرْتُ إِلَى خَاتَمِهِ بَيْنَ كَتِفَيْهِ مِثْلَ زِرِّ الْحَجَلَةِ.

As-Sa’ib bin Yazid said: “My maternal aunt brought me to the Messenger of Allah (s.a.w) and said: ‘O Messenger of Allah, my sister’s son is ailing.’ He ((s.a.w)) wiped my head and prayed for blessing for me, then he performed Wudu and I drank some of his Wudu water. Then I stood behind him and saw the Seal between his shoulders, like a bird’s egg.

حضرت سائب بن یزید سے روایت ہے کہ میری خالہ مجھے رسول اللہﷺکے پاس لے گئیں اور عرض کیا: اے اللہ کے رسولﷺ! میرے بھانجے کے سر میں درد ہے ، آپﷺنے میرے سر پر ہاتھ پھیرا اور میرے لیے برکت کی دعا کی ، پھر آپﷺنے وضو کیا ، میں نے آپ ﷺکے وضو کا بچا ہوا پانی پیا ، پھر میں آپ ﷺکی پشت کے پیچھے کھڑا ہوا ، میں نے آپﷺکے دو کندھوں کے درمیان مسہری(چھپر کھٹ) کی گھنڈی کی طرح مہر نبوت دیکھی ۔


حَدَّثَنَا أَبُو كَامِلٍ ، حَدَّثَنَا حَمَّادٌ ، يَعْنِي ابْنَ زَيْدٍ (ح) وحَدَّثَنِي سُوَيْدُ بْنُ سَعِيدٍ ، حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُسْهِرٍ ، كِلاَهُمَا عَنْ عَاصِمٍ الأَحْوَلِ (ح) وحَدَّثَنِي حَامِدُ بْنُ عُمَرَ الْبَكْرَاوِيُّ ، وَاللَّفْظُ لَهُ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَاحِدِ ، يَعْنِي ابْنَ زِيَادٍ ، حَدَّثَنَا عَاصِمٌ ، عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ سَرْجِسَ ، قَالَ : رَأَيْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَكَلْتُ مَعَهُ خُبْزًا وَلَحْمًا ، أَوْ قَالَ : ثَرِيدًا ، قَالَ : فَقُلْتُ لَهُ : أَسْتَغْفَرَ لَكَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ؟ قَالَ : نَعَمْ ، وَلَكَ ، ثُمَّ تَلاَ هَذِهِ الآيَةَ : {وَاسْتَغْفِرْ لِذَنْبِكَ وَلِلْمُؤْمِنِينَ وَالْمُؤْمِنَاتِ} ، قَالَ : ثُمَّ دُرْتُ خَلْفَهُ ، فَنَظَرْتُ إِلَى خَاتَمِ النُّبُوَّةِ بَيْنَ كَتِفَيْهِ ، عِنْدَ نَاغِضِ كَتِفِهِ الْيُسْرَى ، جُمْعًا ، عَلَيْهِ خِيلاَنٌ كَأَمْثَالِ الثَّآلِيلِ.

It was narrated that ‘Abdullah bin Sarjis said: “I saw the Prophet (s.a.w) and I ate bread and meat with him” – or he said: “Tharid.” He (the narrator) said: “I said to him: ‘Did the Prophet (s.a.w) pray for forgiveness for you?’ He said: ‘Yes, and for you.’ Then he recited this Verse: ‘And ask forgiveness for your sin, and also for (the sin of) believing men and believing women.” He said: “Then I went behind him and looked at the Seal of Prophet – hood between his shoulders, near his left shoulder blade, the shape of a palm with the fingers held together, and on it were spots like moles.”

حضرت عبد اللہ بن سرجس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ میں نے رسول اللہﷺکو دیکھا اور آپﷺکے ساتھ روٹی اور گوشت یا ثرید کھایا ،راوی کہتے ہیں : میں نے عبد اللہ سے پوچھا: کیا نبی ﷺنے تمہارے لیے دعائے مغفرت کی تھی ، انہوں نے کہا: ہاں ! اورتمہارے لیے بھی ، پھر یہ آیت پڑھی ۔ "اپنے لیے استغفار کیجئے اور مسلمان مردوں اور مسلمان عورتوں کے لیے " ۔ پھر میں آپﷺکے پیچھے گیا تو میں نے آپﷺکے دو کندھوں کے درمیان مہرنبوت دیکھی ، وہ آپﷺکے بائیں کندھے کی چپنی ہڈی کے پاس مسوں کے تل کی طرح تھا۔

12345